Pakistan  |  International  |  Business  |  Sports  |  Showbiz  |  Technology  |  Health  |  Wonder  |  Weather  |  Columns

شعیب منصور کی فلم ورنہ کی ریلیز پر پابندی عائد

فائل فوٹو

فائل فوٹو

ملک کے مرکزی سینسر بورڈ نے شعیب منصور کی نئی ورنہ کی ریلیز پر پابندی عائد کردی ہے۔

پاکستانی سینما انڈسٹری کا ایک اور شاہکار ریلیز سے پہلے ہی پابندی کا شکارہوگیا۔

وفاقی سینسر بورڈ نے شعیب منصور کی فلم ‘ورنہ’ کو نمائش کی اجازت دینے سے انکارکردیا ہے۔

فلم ورنہ کی کہانی ایک ایسی خاتون کی ہے جسے ملک کے سب سے بڑے صوبے پنجاب کے گورنر کا بیٹا ریپ کا نشانہ بناتا ہےاور پھر یہ لڑکی انصاف کے حصول کیلئے جدوجہد کرتی ہے۔

فلم میں اس متاثرہ لڑکی کا کردار ماہرہ خان نے نبھایا ہے۔

آغاز میں اس فلم کو سندھ اور پنجاب کے سینسر بورڈ نے پاس کردیا تھااور ساتھ ہی سرٹیفکیٹ کے اجرا کو اسلام آباد بورڈ کی کلیئرنس سے مشروط کیا تھا۔

تاہم وفاقی سینسر بورڈ نے اعتراض لگاتے ہوئے فلم کو نمائش سے روک دیا ہے۔

ذرائع کے مطابق سینسر بورڈ کا کہنا ہے کہ فلم میں ایک صوبے کے گورنر کو خصوصی طور پر نشانہ بنایا گیا ہے۔

اس کے ساتھ ہی سینسربورڈ نے1980 کے فلم کوڈ اور دیگر مروجہ قوانین کے تحت دوبارہ غور کرنے کی یقین دہانی بھی کرائی ہے۔

اٹھارویں آئینی ترمیم کے بعد سینسر بورڈز صوبوں کے زیرانتظام آگئے ہیں جس کے بعد پنجاب اور سندھ کی حکومتوں نے اپنے اپنے سینسر بورڈز قائم کرلیےہیں۔

تاہم یہ صوبائی سینسر بورڈ فلم دیکھنے کے باوجود فیصلہ اسلام آباد کی کلیئرنس کے بعد ہی کرتے ہیں۔

سینسر بورڈ کے پابندی کے باوجود فلم کے ڈسٹری بیوٹر ستیش آنند کا کہنا ہے کہ’ورنہ’ جمعہ 17 نومبر کو امریکا، یورپ، مشرقِ وسطیٰ، آسٹریلیا سمیت پوری دنیا میں نمائش کیلئے پیش کی جارہی ہے اور دنیا بھر میں اس کی نمائش پر پاکستان کے مرکزی سینسر بورڈ کے فیصلے کا کوئی اثر نہیں پڑے گا۔


News Source

شعیب منصور کی فلم ورنہ کی ریلیز پر پابندی عائد

loading...
شناختی عنوان:,

تبصرہ کریں