Pakistan  |  International  |  Business  |  Sports  |  Showbiz  |  Technology  |  Health  |  Wonder  |  Weather  |  Columns

ڈبلیو ڈبلیو ای کی پہلی بھارتی اور عرب خاتون ریسلرز

ورلڈ ریسلنگ انٹرٹینمنٹ (ڈبلیو ڈبلیو ای) نے پہلی بار کسی بھارتی اور عرب خاتون کو اپنے ریسلرز کی ٹیم کا حصہ بنالیا ہے۔

ڈبلیو ڈبلیو ای کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ویمن ڈویژن کو مضبوط بنانے کے لیے پہلی بار ایک بھارتی اور ایک عرب خاتون ریسلر کے ساتھ کنٹریکٹ کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ کچھ عرصے بعد ڈبلیو ڈبلیو ای کے ریسلر بھارت کا ٹور کررہے ہیں اور کسی بھارتی خاتون ریسلر کی خدمات حاصل کرنا اسے کامیاب بنانے کی حکمت عملی کا حصہ لگتا ہے۔

اس سے پہلے جندر مہل بھارت سے تعلق رکھنے والے پہلے ڈبلیو ڈبلیو ای چیمپئن بھی بنے تھے اور بظاہر وہ بھی بھارتی عوام کو ڈبلیو ڈبلیو ای کی جانب متوجہ کرنے کے لیے کیا گیا تھا۔

تاہم پاکستان میں بھی پرستاروں کی توجہ کھینچنے کے لیے گزشتہ سال پہلی بار ایک پاکستانی نژاد ریسلر مصطفیٰ علی کو کروزر ویٹ ڈویژن کا حصہ بنایا گیا جبکہ مائی ینگ کلاسیک ویمن ٹورنامنٹ میں ایک بھارتی ریسلر کویتا دیوی کو شامل کیا گیا۔

مزید پڑھیں : ڈبلیو ڈبلیو ای میں پہلے پاکستانی ریسلر کی شرکت

اب کویتا دیوی کے ساتھ ڈبلیو ڈبلیو ای نے باضابطہ معاہدہ کرلیا ہے اور وہ اس کمپنی کی پہلی بھارتی خاتون ریسلر بن گئی ہیں۔

اسی طرح اردن سے تعلق رکھنے والی شاہدہ بسیسو نامی خاتون ریسلر بھی اس کمپنی کی پہلی عرب ریسلر بنیں گی۔

ڈبلیو ڈبلیو ای کی پہلی عرب خاتون ریسلر— فوٹو بشکریہ ڈبلیو ڈبلیو ای

ڈبلیو ڈبلیو ای کے لیجنڈ ریسلر اور سی او او ٹرپل ایچ نے ایک بیان میں کہا کویتا اور شاہدہ کی خدمات حاصل کرنا دیگر ممالک میں پرستاروں کی بڑھتی تعداد کو مدنظر رکھ کر کی گئی اور ہمیں اعتماد ہے کہ یہ دونوں ریسلرز مستقبل قریب میں ڈبلیو ڈبلیو ای کی سپراسٹارز ہوں گی۔

یہ بھی پڑھیں : پہلی بار ایک بھارتی ریسلر ڈبلیو ڈبلیو ای چیمپئن

ڈبلیو ڈبلیو ای آئندہ سال جنوری میں مزید دیگر ممالک کے ریسلرز کی خدمات حاصل کرنے کی خواہشمند ہے اور توقع کی جاسکتی ہے کہ مزید پاکستانی وہاں جگہ بناسکیں گے۔


News Source

ڈبلیو ڈبلیو ای کی پہلی بھارتی اور عرب خاتون ریسلرز

شناختی عنوان:,