Pakistan  |  International  |  Business  |  Sports  |  Showbiz  |  Technology  |  Health  |  Wonder  |  Weather  |  Columns

سعودی خواتین ڈرائیورز حادثات میں کمی لائیں گی: وزیر داخلہ

سعودی عرب، خواتین، ڈرائیورتصویر کے کاپی رائٹ
AFP

Image caption

خواتین پر ڈرائیونگ نہ کرنے کی پابندی اگلے سال جون میں ختم ہوگی۔

سعودی عرب کے وزیر داخلہ شہزادہ عبدالعزیز بن سعود بن نائف کا کہنا ہے کہ خواتین کی ڈرائیونگ سے پابندی ختم کرنے سے گاڑیوں کے حادثات میں کمی آئے گی۔

انھوں نے اپنے دعوے کو ثابت کرنے کے لیے کوئی ثبوت نہیں دیا لیکن اتنا کہا کہ ‘گاڑی چلانے والی خواتین محفوظ ٹریفک کے قوانین کو تعلیمی مشق میں تبدیل کر دیں گی۔’

سعودی عرب دنیا کے ان ممالک میں شمار کیا جاتا ہے جہاں ٹریفک حادثات میں اموات کی شرح بد ترین ہے اور روزانہ تقریباً 20 افراد ٹریفک حادثات میں ہلاک ہو جاتے ہیں۔

سعودی عرب میں ’خواتین کو ڈرائیونگ کی اجازت‘

سعودی عرب کا ‘تفریحی شہر’ بنانے کا اعلان

خواتین پر ڈرائیونگ نہ کرنے کی پابندی اگلے سال جون میں ختم ہوگی۔ یہ اعلان سعودی عرب کے بادشاہ سلمان نے 27 ستمبر کو کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

سعودی عرب میں غیر ملکی خواتین سمیت ایک کروڑ سے زیادہ بالغ خواتین موجود ہیں۔

سعودی عرب کے وزیر داخلہ نے جمعرات کو ٹوئٹر پیغامات میں کہا ‘گاڑی چلانے والی خواتین محفوظ ٹریفک کے قوانین اپنائیں گی اور معاشی نقصانات میں کمی آئے گی جو ٹریفک حادثات سے ہوتے ہیں۔’

انھوں نے یہ بھی کہا کہ ملک کی سکیورٹی فورسز مردوں اور عورتوں پر ٹریفک کے قوانین ‘ لاگو کرنے کے لیے تیار’ ہیں۔

وزیر داخلہ نے یہ واضح نہیں کیا کہ خواتین کی ڈرائیونگ سے پابندی اٹھانے سے کس طرح خلیجی ریاست میں گاڑیوں کے حادثات میں کمی آئے گی۔

سعودی عرب میں ’تبدیلی کی لہر‘

سعودی عرب میں غیر ملکی خواتین سمیت ایک کروڑ سے زیادہ بالغ خواتین موجود ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Inpho

Image caption

اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ سڑکوں پر گاڑیوں کی بڑھتی تعداد گاڑیوں کے حادثات کی کلیدی وجہ بنتی ہے۔

اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ سڑکوں پر گاڑیوں کی بڑھتی تعداد گاڑیوں کے حادثات کی کلیدی وجہ بنتی ہے۔ مثلاً، صرف امریکہ میں، سنہ 2014 سے سنہ 2016 کے درمیان میں گاڑیوں کی تعداد میں 3.6 فیصد اضافہ ہوا لیکن اسی دوران سڑکوں پر اموات کی شرح میں 13.6 فیصد اضافہ ہوا۔

تاہم، سعودی عرب میں سڑکوں پر چلنے والی گاڑیوں کی تعداد کا ایک اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ وہ کم و بیش آٹھ لاکھ ہوں گی اور اس طرح وہ غیر ملکی ڈرائیور جو سعودی خواتین کی گاڑی چلانے کے لیے بھرتی کیے گئے تھے، بظاہر ان کی نوکری خطرے میں پڑ جائے گی۔

خواتین پر گاڑی چلانے کی پابندی اٹھائے جانے کے فیصلے کو خواتین کے حقوق کے لیے کام کرنے والی خواتین اور عالمی برادری نے سراہا ہے۔

خواتین کے حقوق کے لیے سر گرم سحر ناصف نے اسے ‘عظیم فتح’ قرار دیا ہے، جبکہ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کا کہنا ہے کہ یہ ‘درست سمت میں اہم قدم’ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

دنیا کے بڑے کارساز اداروں نے سعودی عرب میں براہ راست خواتین کے لیے اپنی گاڑیوں کی تشہیر شروع کر دی ہے۔

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان منضور الترکی کا کہنا ہے کہ 18 سال کی عمر سے زیادہ کی خواتین کو ڈرائیونگ کرنے کی اجازت ہوگی۔

تاہم، اس قانون پر اب بھی غور کیا جا رہا ہے جس کی رو سے خواتین کو گاڑی چلانے کی اجازت دی جا رہی ہے اور ان تحفظات کا بھی اظہار کیا جا رہا ہے کہ ٹریفک قوانین کے تناظر میں خواتین کو مردوں کے مقابلے میں زیادہ سخت گرفت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

سعودی عرب کے شاہ سلمان کے اعلان کے بعد دنیا کے بڑے کارساز اداروں نے سعودی عرب میں براہ راست خواتین کے لیے اپنی گاڑیوں کی تشہیر شروع کر دی ہے۔

ایسے ادارے جو ٹوئٹر کے ذریعے اپنے اشتہارات چلا رہے ہیں ان میں واکس ویگن، فورڈ اور نسان شامل ہیں۔


News Source

سعودی خواتین ڈرائیورز حادثات میں کمی لائیں گی: وزیر داخلہ