Pakistan  |  International  |  Business  |  Sports  |  Showbiz  |  Technology  |  Health  |  Wonder  |  Weather  |  Columns

گلوبل جینڈر گیپ رپورٹ 2018 کے پانچ حیران کن انکشافات: خواتین کو برابری دینے میں پاکستان صرف یمن سے آگے

جینڈر گیپتصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

اس رپورٹ کے مطابق جنوبی ایشیائی ممالک میں بھی پاکستان آخری نمبر پر ہے

پاکستان کا شمار ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں خواتین کے حقوق کی صورتِ حال انتہائی تشویشناک ہے۔

ورلڈ اکنامک فورم کی سالانہ ’گلوبل جینڈر گیپ رپورٹ 2018‘ میں پاکستان کو 149 ملکوں کی فہرست میں 148 نمبر پر رکھا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Global Gender Gap Report 2018

Image caption

جنوبی ایشیائی ممالک میں بھی پاکستان آخری نمبر پر ہے

پاکستان کی صورتِ حال اتنی گمبھیر ہے کہ ملک کے صدر نے بھی اس پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔

سنہ 2006 سے ہر سال شائع ہونے والی اس رپورٹ میں صنفی تفریق کا جائزہ لیا جاتا ہے اور ہر ملک کی چار شعبوں میں کارکردگی کی بنیاد پر درجہ بندی کی جاتی ہے: خواتین کے لیے اقتصادی مواقعوں کی فراہمی، ان کی تعلیمی کارکردگی، صحت اور ان کو سیاسی اختیارات کی فراہمی۔

لیکن محض یہی بری خبر نہیں!

رپورٹ کے مطابق اگر دنیا نے خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے خاطر خواہ اقدامات نہ کیے تو مرد اور عورت کے درمیان موجود تنخواہوں کے فرق کو پُر کرنے میں 100 سال سے زیادہ عرصہ لگ سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

’مساوات حاصل کرنے میں 200 سال لگیں گے‘

دنیا بھر میں مشترکہ طور پر عدم مساوات کی وجہ سے اقتصادی مواقعوں کی فراہمی کے حوالے سے حالات تو خراب ہیں ہی، لیکن مردوں اور عورتوں کے درمیان تنخواہوں کا فرق اس سے بھی بدتر ہے۔

البتہ سیاست وہ واحد شعبہ ہے جہاں تیزی سے بہتری آ رہی ہے۔ تو جہاں سیاسی برابری حاصل کرنے میں اوسطاً 107 سال لگیں گے، وہیں اقتصادی طور پر بااختیار ہونے میں مزید 202 سال بیت جائیں گے۔

انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن کی ایک تازہ رپورٹ کے مطابق مردوں اور عورتوں کے درمیان تنخواہوں کے فرق کی عالمی اوسط 20 فیصد ہے۔

یہ بھی پڑھیے

یہ ’فیمنسٹ‘ اصل میں کیسی ہوتی ہیں؟

سعودی خواتین کونسل میں خواتین کہاں ہیں؟

’خواتین کو ووٹر اور سپورٹر کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے‘

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بین الاقوامی سطح پر سینیئر عہدوں پر فائض خواتین کی شرح صرف 35 فیصد ہے اور انکشاف کیا گیا ہے کہ مردوں کے مقابلے میں خواتین ایسے کام زیادہ کرتی ہیں جن کی انھیں کوئی اجرت نہیں ملتی۔

تحقیق کے مطابق 60 فیصد ممالک میں خواتین کے پاس بینکنگ اور دیگر اقتصادی سہولیات تک رسائی کے مواقع مردوں کے برابر ہیں، جبکہ جائیداد کے مساوی حقوق صرف 42 فیصد ممالک میں ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

مشرقی افریقہ کے ملک روانڈا کی پارلیمان میں 61 فیصد سے زیادہ اراکین خواتین ہیں

سرکاری دفاتر میں امتیازی سلوک

رپورٹ میں جن 149 ممالک کا ذکر ہے، ان میں صرف 17 ملکوں کی سربراہی خواتین کے ہاتھوں میں ہے۔

پچھلی نصف صدی میں ایک خاتون وزیراعظم یا سربراہ مملکت کا اوسط دورِ حکومت 2 .2 برس بتایا جاتا ہے، اور اگر ملک کی کابینہ میں شمولیت کی بات کی جائے تو خواتین کی اوسط شرح محض 18 فیصد ہے۔

دنیا بھر میں پارلیمان میں شمولیت کے لحاظ سے خواتین کے حصے میں صرف 24 فیصد نشستیں آتی ہیں۔

لیکن اس لحاظ سے مشرقی افریقہ کے ملک روانڈا میں صورتحال کچھ منفرد ہے۔ وہاں کی پارلیمان میں 61 فیصد سے زیادہ اراکین خواتین ہیں، جس کی بدولت روانڈا کا شمار گلوبل جینڈر گیپ رپورٹ میں چھٹے نمبر پر ہوتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

تعلیمی مواقعوں کی کمی

ورلڈ اکنامک فورم کا دعویٰ ہے کہ 44 ممالک میں خواتین کی شرح خواندگی 80 فیصد سے کم ہے۔ رپورٹ کے مطابق افریقی ملک چاڈ میں حالات سب سے گمبھیر ہیں، جہاں صرف 13 فیصد خواتین لکھ یا پڑھ سکتی ہیں۔

لیکن مثبت بات یہ سامنے آئی ہے کہ تعلیم کے شعبے میں موجود صنفی تفریق کا خاتمہ 14 برسوں میں ممکن ہو سکتا ہے۔

لیکن رپورٹ میں یہ خدشہ ظاہر کیا گیا ہے کہ لڑکوں کے مقابلے میں سکول جانے والی لڑکیوں کی شرح کم ہے۔

سیکنڈری سکول میں یہ تناسب 66 فیصد (لڑکے) اور 65 فیصد (لڑکیاں) ہے، لیکن یونیورسٹی پہنچ کر صرف 39 فیصد لڑکیاں رہ جاتی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

صرف تین ممالک ایسے ہیں جہاں مردوں کی زندگی خواتین سے زیادہ لمبی ہے

صحت کی صورت حال

رپورٹ کے مطابق مردوں اور عورتوں کی عمروں کے درمیان فرق تقریباً ختم ہونے کو ہے۔

149 میں سے صرف تین ممالک ایسے تھے جہاں مردوں کی اوسط طبعی عمر خواتین سے اب بھی زیادہ ہے۔ ان میں کویت، بھوٹان اور بحرین شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

آئس لینڈ صنفی مساوات کے حوالے سے سرِ فہرست رہا

صرف پیسہ مسائل کا حل نہیں

اگرچہ چار ترقی یافتہ ملک – آئس لینڈ، ناروے، سویڈن اور فن لینڈ – 149 ممالک میں سرِفہرست ہیں، یہ کہنا غلط ہوگا کہ صرف پیسہ ہی خوشحالی کا ضامن ہے۔

ٹاپ ٹین میں چار ترقی پذیر ممالک – نکاراگوا (5)، روانڈا (6)، فلپائن (8) اور نمیبیا (10) – بھی شامل ہیں۔

اس کے برعکس دنیا کی سب سے بڑی معیشت، امریکہ، 51ویں نمبر پر آتی ہے، جبکہ اٹلی کا 70واں نمبر ہے۔

روس (75)، برازیل (95)، چین (103) اور جاپان (110) حیران کن طور پر رینکنگ میں کافی نیچے پائے جاتے ہیں۔


News Source

گلوبل جینڈر گیپ رپورٹ 2018 کے پانچ حیران کن انکشافات: خواتین کو برابری دینے میں پاکستان صرف یمن سے آگے